اپوزیشن اتحاد کو زبردست دھچکا، جماعت اسلامی نے اے پی سی میں شرکت سے انکار کردیا

0
89

لاہور (اے ون نیوز) اپوزیشن اتحاد کو زبردست دھچکا، جماعت اسلامی نے اے پی سی میں شرکت سے انکار کردیا، جمیعت علماء اسلام ف کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے 2 روز قبل سراج الحق سے ملاقات کرکے آل پارٹیز کانفرنس میں شرکت کی دعوت دی تھی۔ تفصیلات کے مطابق اپوزیشن اتحاد کو حکومت مخالف آل پارٹیز کانفرنس کے انعقاد کے سلسلے میں زبردست دھچکا پہنچا ہے۔اپوزیشن کی بڑی جماعت اور مولانا فضل الرحمان کے حالیہ اتحادی جماعت اسلامی کے سربراہ سراج الحق نے حکومت مخالف آل پارٹیز میں شرکت سے صاف انکار کردیا ہے۔ مولانا فضل الرحمان نے امیر جماعت اسلامی سراج الحق کو خود ملاقات کرکے حکومت مخالف آل پارٹیز کانفرنس میں شرکت کی دعوت دی تھی، تاہم وہ اپنے اتحادی کو قائل کرنے میں ناکام رہے۔

دوسری جانب حکومت کو گرانے یا اس کیخلاف تحریک چلانے کے حوالے سے بلوائی گئی آل پارٹیز کانفرنس کے انعقاد کی تاریخ کے معاملے پر اپوزیشن جماعتوں میں پھوٹ پڑ گئی ہے۔میڈیا رپورٹس کے مطابق پاکستان پیپلز پارٹی، پاکستان مسلم لیگ ن اور اے این پی کی جانب سے جمیعت علماء اسلام ف کے سربراہ مولانا فضل الرحمان سے درخواست کی گئی ہے کہ 26 مئی کو شیڈول آل پارٹیز کانفرنس ملتوی کر دی جائے گی۔ بجٹ کے معاملے پر قومی اسمبلی کا سیشن جاری ہے جو 29 جون تک جاری رہے گا۔ اسی باعث ن لیگ، پیپلز پارٹی اور دیگر اپوزیشن جماعتوں نے آل پارٹیز کانفرنس فی الحال ملتوی کرنے کی درخواست کی ہے۔

تاہم جمیعت علماء اسلام ف کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے مسلم لیگ ن اور پیپلز پارٹی کی درخواست قبول کرنے سے انکار کردیا ہے۔ مولانا فضل الرحمان نے موقف اختیار کیا ہے کہ چونکہ آل پارٹیز کانفرنس میں شرکت کیلئے دعوت نامے بھیجے جا چکے، اس لیے کانفرنس ملتوی نہیں کی جا سکتی۔ اسی باعث اپوزیشن جماعتوں کی آل پارٹیز کانفرنس انعقاد سے قبل ہی ناکام ہوتے دکھائی دے رہی ہے۔

جبکہ یہ بھی بتایا گیا ہے کہ مولانا فضل الرحمان نے اپوزیشن جماعتوں کو مشورہ دیا ہے کہ اپوزیشن کے اراکین اسمبلی استعفیٰ دے دیں، یوں حکومت خود ہی ختم ہو جائے گی۔ اپوزیشن جماعتوں نے اس حوالے سے مشاورت کرنے کی یقین دہانی کروائی ہے۔ تاہم اس حوالے سے مولانا فضل الرحمان کو کوئی حتمی جواب دینے سے گریز کیا گیا ہے۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here