بائیو سیکیورٹی کے پہرے میں نیشنل ٹی ٹونٹی کرکٹ ٹورنامنٹ کی تیاریاں عروج پر

0
OLYMPUS DIGITAL CAMERA

لاہور(اے ون نیوز) پاکستان کرکٹ بوڈ رنے زمبابوے کیخلاف سیریز سے قبل ہونے والے ڈومیسٹک نیشنل ٹی ٹونٹی ٹورنامنٹ کو کورونا پروٹوکولز سیکھنے کا بہترین موقع قرار دیتے ہوئے بائیو بیل سیکیورٹی کے حوالے سے پی سی بی میڈیکل کمیٹی کی زیرنگرانی کام کرنے والی ٹیم کو ہر ممکن سہولیات فراہم کرنے کا فیصلہ کر لیا ہے ۔

پاکستان کرکٹ بورڈ قومی ٹی ٹونٹی کرکٹ ٹورنامنٹ کو ہر صورت کامیاب بنانا چاہتا ہے۔بائیو سیکیورٹی کے پہرے میں نیشنل کرکٹ ٹورنامنٹ کی تیاریاں عروج پر پہنچ گئیں ہیں۔ قومی ٹی ٹونٹی ٹورنامنٹ کے اسکواڈز کو پریکٹس کیلئے میدان کی جانب روانہ کرنے سے قبل بسوں کو ڈس انفیکٹ کیا جا رہا ہے،

کھلاڑیوں اور معاون سٹاف وینیوز تک پہنچنے اور واپسی سے قبل کورونا پروٹوکولز کی پاسداری کرتے ہوئے ماسک اور گلوز استعمال کر رہے ہیں۔پہلے خیبر پختونخوا، سینٹرل اور سدرن پنجاب کے پلیئرز نے پریکٹس سے لہو گرمایا،بعد میں سندھ، ناردرن اور بلوچستان کی باری آئی،طویل وقفے کے بعد نیٹ میں باقاعدہ بولنگ کرنے والے پیسرز کو انجریز سے بچانے کیلئے لمبے سپیل کروانے سے گریز کیا گیا۔،

دوسری جانب پہلا ٹیسٹ نیگیٹو آنے کے بعد سیکنڈ الیون ٹیموں میں شامل کرکٹرز اور معاون سٹاف کے ارکان سمیت 125 افراد کو سینٹرل اسٹیشنز پر ٹھہرا دیا گیا، پی سی بی میڈیکل ٹیم کی زیرنگرانی دوسری ٹیسٹنگ بھی ہوگئی اور یوں یہ مرحلہ بھی مکمل ہو گیا۔ قومی ٹی ٹوئنٹی ٹورنامنٹ کیلئے صوبائی ٹیموں میں شامل فرسٹ الیون کے کھلاڑیوں اور معاون سٹاف نے پہلے کورونا ٹیسٹ اپنے طور پر متعلقہ شہروں میں کروائے تھے،

دوسرے مرحلے میں پی سی بی کے زیراہتمام کنٹری کلب مریدکے اور ملتان میں قائم کیے گئے سینٹرل اسٹیشنزمیں سیمپلز حاصل کیے گئے، نتائج منفی آنے پر تمام 6 اسکواڈز سیکیورٹی ببل میں ہیں، ہوٹل کے کمرے، کھانے کی جگہ، انڈور گیمز کے کمرے، ڈریسنگ روم، ٹیموں کی بسیں و گاڑیاں اور کھیل کے میدان بائیو سیکیور زون کا حصہ ہیں۔بائیو سکیور ببل میں صرف کھلاڑیوں، معاون سٹاف، سیکیورٹی منیجرز، ڈیوٹی ڈاکٹرزاور ڈرائیورز کو رہنے کی اجازت ہے،

گراﺅنڈ سٹاف اور وینیو منیجرز کو دوسری تہہ میں رکھا گیا ہے،امپائرز اور میچ ریفریز کے پہلے کورونا ٹیسٹ 24 ستمبر کو ہوں گے۔دوسرے 27 کو سینٹرل اسٹیشنز پر لیے جائیں گے، کلیئر ہونے والے میچ آفیشلز بھی بائیو سیکیور ببل کی پہلی تہہ میں رہیں گے، دورہ انگلینڈ سے واپس آنے والے قومی کرکٹرز 25 ستمبر کو اپنے اسکواڈز کے ساتھ شامل ہوں گے، ملتان میں موجود کھلاڑیوں اور معاون سٹاف نے ہوٹل میں ناشتہ کیا تو اس دوران بھی بڑی تعداد کو ایک جگہ جمع کرنے سے گریز کیا گیا،

بعد ازاں بھی کھانے کے دوران احتیاط برتی گئی۔پریکٹس کیلئے ملتان کرکٹ اسٹیڈیم اور انضمام الحق ہائی پرفارمنس سینٹر کا رخ کرنے والی ٹیموں کی بسوں کو اسپرے کر کے ڈس انفیکٹ کیا گیا، کھلاڑیوں نے راستے میں گلوز اور ماسک پہنے، پہلے سیشن میں خیبر پختونخوا،سینٹرل پنجاب اور سدرن پنجاب کی ٹیموں کو پریکٹس کا موقع ملا،

دوسرے سیشن میں سندھ، ناردرن اور بلوچستان کی ٹیمیں ایکشن میں نظر آئیں،ایک عرصے بعد باقاعدہ ٹریننگ کا موقع ملنے پر کرکٹرز بہت خوش تھے۔بیٹسمینوں اور اسپنرز نے خاصی سرگرمی دکھائی،ذرائع نے بتایا کہ طویل وقفے کے بعد میدان میں اترنے والے پیسرز کو انجریز سے بچانے کیلیے کوچز نے لمبے اسپیل کروانے سے گریز کیا، ان کو مشورہ دیا گیا کہ بتدریج ردھم میں آنے سے مسائل پیدا نہیں ہوں گے۔

دوسری جانب قومی ٹی ٹونٹی ٹورنامنٹ کے لیے6 صوبائی اسوسی ایشنز کی سیکنڈ الیون ٹیموں کی پہلی کورونا ٹیسٹنگ کا عمل مکمل ہو گیا، اپنے طور پر کروائے گئے پہلے ٹیسٹ کے نتائج موصول ہونے کے بعد کلیئر قرار پانے والے 125 کھلاڑیوں اور سپورٹ سٹاف کوسینٹرل اسٹیشنز میں طلب کرلیا گیا تھا،گزشتہ روز دوسری ٹیسٹنگ پپی سی بی میڈیکل ٹیم کی زیرنگرانی مقررہ سینٹرل اسٹیشنز پر ہو گئی۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here