ورلڈ کپ کے پاک افغان میچ میں تشدد کرنے والوں کی تصاویر جاری

0
143

لندن(اے ون نیوز)انگلینڈ کی پولیس نے ورلڈ کپ میں پاکستان اور افغانستان کے درمیان میچ میں تشدد اور بدمزگی کرنے والے 8 افراد کی تصاویر جاری کرتے ہوئے ان کو ڈھونڈنے میں مدد کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔29 جون کو ہیڈنگلے میں پاکستان اور افغانستان کے درمیان میچ سے قبل اسٹیڈیم کے باہر اور پھر میچ کے دوران اسٹیڈیم میں افغان تماشائیوں نے پاکستانی شائقین کو تشدد کا نشانہ بنایا تھا۔

پولیس کا کہنا تھا کہ یہ افراد باقاعدہ منظم گروپ کی شکل میں موجود تھے اور اس سلسلے میں تین گرفتاریاں عمل میں آئی تھیں۔پولیس افسران کا کہنا ہے کہ سی سی ٹی وی اور سوشل میڈیا فوٹیج کے ذریعے انہیں بدنظمی اور پرتشدد کے چار واقعات کا پتہ چلا تھا اور ان کی مدد سے مشتبہ افراد کو ڈھونڈنے کے لیے پرعزم ہیں۔

سوشل میڈیا پر زیر گردش ویڈیوز میں تماشائیوں کے ایک گروہ کو مرکزی سڑک اور اسٹیڈیم کے درمیان واقع دروازے کو توڑنے کی کوشش کرتے ہوئے دیکھا گیا تھا جبکہ کچھ نے میدان کی آہنی باڑ کو پھلانگتے کی بھی کوشش کی تھی۔

اس سلسلے میں گرفتار کیے گئے دو افراد کو بغیر فرد جرم عائد کیے چھوڑ دیا گیا تھا جبکہ تیسرا فرد اس وقت ضمانت پر رہا ہے۔ویسٹ یارکشائر پولیس کا کہنا ہے کہ 29جون کو کھیلے گئے میچ میں میدان میں گڑبڑ پر انہیں دوپہر میں طلب کیا گیا تھا ۔

پولیس آفیشلز کا کہنا ہے کہ اس سے قبل میچ کے دوران اس طرح کے پرتشدد واقعات کی مثال نہیں ملتی اور پرفضا ماحول میں میچ دیکھنے کے لیے آنے والے پرامن شہریوں کا اس صورتحال پر تشویش کا اظہار قابل سمجھ ہے۔

انہوں نے کہا کہ ہم اس طرح کے رویے کی اجازت نہیں دے سکتے اور واضح پیغام دینا چاہتے ہیں کہ اس طرح کی چیزوں کو بالکل بھی برداشت نہیں کیا جائے گا۔

ڈیٹیکٹیو سپرنٹنڈنٹ جیز خان نے کہاکہ اگر کسی کو بھی ان 8 افراد کے بارے میں کوئی اطلاع ہو تو وہ قانون نافذ کرنے والے اداروں کو اس بارے میں فوری اطلاع دے۔

انہوں نے کہا کہ ہم اس تصویر میں موجود لوگوں کو پیغام دیتے ہیں کہ وہ ہمارے پاس آ کر اس واقعے کے بارے میں بات کریں قبل اس کے کہ ہم انہیں گرفتار کر لیں۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here