پاکستان نے 18بین الاقوامی ایئرلائنزکوا ہم ہدایت جاری کردی

0

اسلام آباد(اے ون نیوز) ایوی ایشن ڈویژن نے 18 بین الاقوامی ایئرلائنز کو ہدایت کی ہے کہ وہ پاکستان کے لیے پرواز میں پلاسٹک کٹلری (کانٹے اور چمچے) کا استعمال روک دیں۔ ایئرلائنز کو یہ بھی ہدایت کی گئی ہے کہ کٹلری پلاسٹک یا پولیتھین بیگز میں بند ہونے کے بجائے کاغذ میں پیک ہوں۔ایوی ایشن ڈویژن کے سینئر جوائنٹ سیکریٹری امجد ستار کھوکھر کی جانب سے یہ معلومات وزیراعظم کے مشیر برائے موسمیاتی تبدیلی ملک امین اسلم سے شیئر کی۔

یہ دونوں شخصیات پارلیمنٹ ہاؤس کے کمیٹی روم میں موجود تھے، جہاں سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے موسمیاتی تبدیلی کا اجلاس شیڈول تھا لیکن کمیٹی چیئرپرسن ستارہ امتیاز ارو دیگر اراکین کے وقت پر نہ آنے سے یہ ملتوی ہوگیا، تاہم اس دوران اس کمیٹی روم میں میڈیا نمائندگان بھی موجود تھے۔

اس موقع پر امجد ستار کھوکھر کا کہنا تھا کہ ‘ہم نے ایئرلائنز کو ہدایت کی ہے کہ وہ پروازوں میں پلاسٹک کٹلری کا استعمال نہیں کریں کیونکہ ہم پلاسٹک کا استعمال روکنا چاہتے ہیں، ساتھ ہی انہوں نے بتایا کہ یہ دیکھا گیا ہے کہ کٹلری کو پلاسٹک بیگز میں پیک کیا جاتا لہٰذا ہم نے یہ بھی ہدایت کی ہے کہ اس بات کو یقینی بنائیں انہیں پولیتھین کے بجائے کاغذ میں لپیٹا جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ ‘ہم نے یہ بھی فیصلہ کیا ہے کہ ہوائی اڈوں (ایئرپورٹس) پر اس سلسلے میں پیغامات کے ساتھ اسٹینڈز بھی لگائیں تاکہ بیرون ملک سے آنے والے مسافروں کو یہ معلوم ہوسکے کہ پاکستان میں پلاسٹک بیگز کا استعمال ممنوع ہے’۔اس موقع پر ملک امین اسلم نے ان اقدامات کی تعریف کی اور کہا کہ اس طرح کے پیغامات کی ایئرپورٹس کے قریب لگے برقی بورڈز پر بھی تشہیر کی جاسکتی ہے۔

وزیراعظم کے مشیر نے کسی ملک کا نام لیے بغیر کہا کہ ‘ میں ایک ملک میں سفر کر رہا تھا کہ وہاں داخلے کے وقت مجھے کہا گیا کہ پلاسٹک بیگز استعمال کرنے پر 200 ڈالر کا جرمانہ ہوگا’۔علاوہ ازیں امجد ستار کھوکھر نے ڈان سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ کچھ ماہ قبل ایئرلائنز کو تحریری ہدایات ارسال کردی گئیں تھیں جبکہ اس کے بعد انہیں یاد دہانی کے لیے بھی پیغام بھیجا گیا تھا تاکہ وہ اس پر عملدرآمد یقینی بنا سکیں۔

انہوں نے کہا کہ ‘صرف چائنا ساؤتھدرن ایئرلائنز کی جانب سے ہم سے پوچھا گیا تھا کہ کس قانون کے تحت پلاسٹک کٹلری کے استعمال کو روک رہے اور ہم نے انہیں اس کا جواب دے دیا، تاہم کسی دوسری ایئرلائنز نے اس بارے میں نہیں پوچھا جس کا مطلب ہے کہ انہیں کوئی اعتراض نہیں، لہٰذا ہمیں امید ہے کہ ایوی ایشن ڈویژن کے اس فیصلے پر جلد ہی عملدرآمد ہوگا’۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here