سپریم کورٹ نے کراچی کے نالوں کی صفائی کاکام این ڈی ایم اے سے سندھ حکومت کو دینے کی استدعا مستردکردی

0

کراچی(اے ون نیوز)سپریم کورٹ نے کراچی کے نالوں کی صفائی کاکام این ڈی ایم اے سے سندھ حکومت کو دینے کی استدعا مستردکردی،چیف جسٹس پاکستان نے کہاکہ اصل مسئلہ یہ ہے کہ ورلڈبینک کی فنڈنگ خطرے میں پڑ گئی ہے،کل ورلڈبینک پوچھ لے یہ این ڈی ایم اے کون ہے؟ان کو تو فنڈہضم کرناہے ،آپ بتائیں اس سے پہلے کونسا فنڈصحیح استعمال ہوا ہے؟۔

سپریم کورٹ کراچی رجسٹری میں نالوں کی صفائی کے معاملے پر سماعت ہوئی،چیف جسٹس گلزاراحمد کی سربراہی میں بنچ نے سماعت کی،اٹارنی جنرل نے کہاکہ ہمیں 30 اگست تک موقع دیں نالوں کی صفائی کاکام جاری ہے ،ہم ریکارڈلے آئے ہیں،نالوں کی صفائی کاکام جاری ہے۔

سیکرٹری بلدیات نے رپورٹ عدالت میں پیش کرنے دی،رپورٹ میں کہاگیاہے کہ گجرنالے میں50 فیصد،سی بی ایم میں 20 فیصد صفائی ہو چکی تھی ،چیف جسٹس گلزاراحمد نے کہاکہ اگر صفائی ہو گئی تھی تو پانی کیسے آیا؟،ایڈووکیٹ جنرل نے کہاکہ بارش ہوتی ہے تو پانی توآتا ہے ،چیف جسٹس پاکستان نے کہاکہ یہ تو ایسا ہی کام ہوتا ہے جیسا ہر جگہ ہوتا ہے ،ایڈووکیٹ جنرل نے کہاکہ ورلڈ بینک کے تعاو ن سے اچھاکام ہو رہا ہے ۔

چیف جسٹس گلزاراحمد نے کہاکہ مطلب ورلڈبینک کاپیسہ بھی گیا،ایڈووکیٹ جنرل نے کہاکہ تصاویر3 اگست تک کی ہیں ،رپورٹ11 اگست تک ،سی ایم نے یقین دلایاکہ 30 اگست تک صفائی کاکام مکمل ہو جائے گا۔

جسٹس اعجاز الاحسن نے استفسار کیا توآپ این ڈی ایم اے کیساتھ ملکرکام کرلیں کیامسئلہ ہے؟،ایڈووکیٹ جنرل نے کہاکہ سندھ حکومت کام کررہی ہے 30 اگست تک کام مکمل ہوجائے گا،این ڈی ایم اے مشینری ،لیبرہماری استعمال کریگی،انکا سپروائزر کھڑاہوگا۔

چیف جسٹس پاکستان نے کہاکہ آپ رپورٹ لے کرآئے ہیں اس کامطلب کل کچھ ہوا ہے،اٹارنی جنرل نے کہاکہ کل وفاق کو نالے صاف کرنے کاحکم دیا تو آج اچھی تصویریں دکھائی جارہی ہیں۔

چیف جسٹس پاکستان نے کہاکہ اصل مسئلہ یہ ہے کہ ورلڈبینک کی فنڈنگ خطرے میں پڑ گئی ہے،کل ورلڈبینک پوچھ لے یہ این ڈی ایم اے کون ہے؟ان کو تو فنڈہضم کرناہے ،آپ بتائیں اس سے پہلے کونسا فنڈصحیح استعمال ہوا ہے؟،5تصویریں پیش کرکے کیاثابت کرناچاہتے ہیں؟،کراچی کی ساڑھے 3 کروڑ کی آبادی ہے،دو تین نالے صاف کرکے آپ کہتے ہیں کراچی کا مسئلہ حل ہوگیا؟۔

چیف جسٹس پاکستان نے کہاکہ آپ چاہتے ہیں این ڈی ایم اے کو روک دیاجائے؟ایڈووکیٹ جنرل نے کہاکہ 30 اگست تک موقع دیں سی ایم نے یقین دلایاہے کہ ہوجائے گا،عدالت نے کیس کی سماعت ملتوی کردی۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here