بدقسمتی سے ویسٹرن بلاک اکٹھا ہوکرایک دوسرے کو بیک کرتا ہے،رمیزراجہ

0

لاہور (اے ون نیوز)پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) کے چیئر مین رمیز راجہ نے نے کہا کہ انگلینڈ کی جانب سے دورہ سے وعدے کرنے کے باوجود ٹور سے دستبردار ہونا مایوس کن ہے۔ ٹیم نے دورہ اس وقت دورہ منسوخ کیا جب ہمیں سب سے زیادہ ضرورت تھی، انشاء اللہ ہم اس حالات سے باہر نکل آئینگے۔ اپنے ٹویٹ میں انہوں نے مزید کہا کہ یہ قومی ٹیم کے لیے ویک اپ کال ہے، جب ہم دنیا کی بہترین ٹیم بنیں گے تو کھیلنے والوں کی لائن لگ جائے گی۔

رمیز راجہ کا کہنا تھا کہ انگلینڈ کرکٹ بورڈ کے فیصلے کی سمجھ تھی، بدقسمتی سے ویسٹرن بلاک اکٹھا ہوکر ایک دوسرے کو بیک کرتا ہے، سکیورٹی کو بنیاد بناکر آپ کوئی بھی فیصلہ کرسکتے ہیں، غصہ نیوزی لینڈ پر ہے جو سکیورٹی کا بہانہ بنا کر چلے گئے، پوچھتے رہے لیکن سکیورٹی تھریٹ کا نہ بتایا گیا، ہم مشکل وقت میں سب ملکوں کو سپورٹ کرتے ہیں، ہمارے کھلاڑی جاکر قرنطینہ میں دس دن رہتے ہیں اور ڈانٹ بھی سنتے، اب ہم صرف اپنے بارے میں سوچیں گے۔

برطانوی خبر رساں ادارے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے رمیز راجہ کا کہنا تھا کہ میں بہت زیادہ مایوس ہوں اور اتنے ہی شائقین بھی۔ اس وقت ہمیں انگلینڈ کی ضرورت تھی۔ جب پاکستان کو مغربی بلاک کی ضرورت تھی تو انھوں نے ہماری مدد نہیں کی۔انھوں نے مزید کہا کہ سکیورٹی دنیا میں کسی جگہ بھی مسئلہ ہو سکتا ہے۔ جس طرح مغربی بلاک نے مسئلے کو ہینڈل کیا ہے، اس سے ہمیں لگتا ہے کہ ہمیں غیر اہم سمجھا گیا ہے۔

انگلش کرکٹ بورڈ کی طرف سے جاری کردہ بیان کے مطابق رواں سال پاکستان کے ساتھ ورلڈکپ سے قبل دو ٹی ٹونٹی میچز کھیلنے کا فیصلہ کیا تھا، یہ میچز آئندہ ماہ اکتوبر میں ہونا تھے۔انگلش کرکٹ بورڈ کے مطابق مردوں کے ساتھ خواتین کرکٹ کا دورہ پاکستان بھی ختم ہو گیا ہے۔ ہمارے کھلاڑیوں اور معاون عملے کی ذہنی اور جسمانی فلاح ہماری اولین ترجیح ہے۔ ہم سمجھتے ہیں کہ ان حالات میں دورہ کرنا آئی سی سی مینز ٹی 20 ورلڈ کپ کے لیے مثالی تیاری نہیں ہو گی جہاں 2021ء کے لیے اچھی کارکردگی کا مظاہرہ اولین ترجیح ہے۔

انگلش کرکٹ بورڈ کے مطابق ہم سمجھتے ہیں کہ یہ فیصلہ پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) کے لیے اہم مایوسی ہوگا جنہوں نے ملک میں بین الاقوامی کرکٹ کی واپسی کی میزبانی کے لیے انتھک محنت کی ہے۔ پاکستان میں کرکٹ پر اسکے اثرات کے لیے ہم مخلصانہ طور پر معذرت خواہ ہیں اور 2022ء کے لیے ہمارے اہم دوروں کے منصوبوں کے لیے جاری عزم پر زور دیتے ہیں۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here